Danger of Hunger vs Population Jang 25 Sep 2021

Danger of Hunger vs Population

Global scientists have repeatedly called the growing human population a “dangerous storm” and said the world’s food, energy, and water crisis could intensify by the year 2030. By then, the world population will reach 8.3 billion, increasing food and energy demand by 50 percent and clean water by 30 percent, while unpredictable climate change could exacerbate the problem with dire consequences.

According to scientists, the solution to this problem is the following:

  • Development of the agricultural sector
  • Food production
  • Increase in water resources
  • Acquisition of environmentally friendly energy.

In this context where fortunately the Kingdom of God-given Pakistan is one of the few lands about which the adage of “spewing gold” prevails, four seasons, the great blessing of the monsoon, thousands of small to irrigate it. There are natural resources to build medium dams, rivers, streams, excellent canal systems, all kinds of agricultural products.

However, according to the United Nations World Food Program, the number of malnourished people in Pakistan has risen from 60 million to 77 million. These words are certainly a wake-up call for the country where this situation exists. Prime Minister Imran Khan in his address at the Farmers Convention and Farmers Card Distribution Ceremony in Dera Ismail Khan on Thursday (on 23 Sep 2021) warned that if the population continues to grow and the rate of production does not increase, the country will go hungry and may face poverty. In this regard, the Prime Minister also rightly referred to the fact that despite being an agricultural country, 4 million tons of wheat had to be imported last year, and this year the situation is as it is despite record production. In addition, the most important industrial and export-oriented commodity, such as cotton, on which the economy is heavily dependent, has been producing very low yields for the past several years, despite favorable natural environment as well as ministries, scientific institutes at federal and provincial levels.

A complete infrastructure already prevails including universities, microfinance banks for farmers, fertilizer factories, and other facilities. Despite this, only 47% of the total agricultural area in the country is cultivated. In India, a country of 1.5 billion people, the rate is 60 percent or even 80.4 percent (highest) in Kazakhstan.

In 1961, 46.3% of Pakistan’s agricultural area was used, as if only 0.7% was made cultivable in 60 years. In contrast, developed countries are getting double the yield per acre than before. It is gratifying that the government has met an urgent need by holding a farmers’ convention Through which the problems faced by the farmers come to the notice of the authorities directly. However, it is imperative that purposeful conferences be held with agricultural scientists on planning, finance, agriculture, industry, and trade. In the light of the experiences of developed countries, in particular, concrete short and long-term plans on population and food should be formulated and their timely implementation should be ensured in order to meet the challenges of the future.

Danger of Hunger vs Population
Danger of Hunger vs Population

عالمی سائنسدان بڑھتی ہوئی انسانی آبادی کو ایک خطرناک طوفان قرار دیتے ہوئے بارہا یہ کہہ چکے ہیں کہ دنیا میں 2030تک خوراک، توانائی اور پانی کا بحران شدت اختیار کر سکتا ہے۔ اس وقت تک عالمی آبادی 8ارب 30کروڑ تک پہنچ جائے گی جس کی وجہ سے خوراک اور توانائی 50فیصد اور صاف پانی کی ضرورت 30فیصد بڑھے گی جبکہ غیرمتوقع طور پر ہونے والی ماحولیاتی تبدیلیاں مسائل کو شدید کر سکتی ہیں جس کے خطرناک نتائج مرتب ہوں گے۔ سائنسدانوں کے نزدیک اس مسئلے کا حل زرعی شعبے کی ترقی، غذائی پیداوار، پانی کے ذخائر میں اضافہ اور ماحول دوست توانائی کا حصول ہے۔ اس تناظر میں جہاں خوش قسمتی سے مملکت خداداد پاکستان کا شمار ایسی چند ایک سرزمینوں میں ہوتا ہے جن کے بارے میں ’’سونا اُگلنے‘‘ کی کہاوت غالب آتی ہے، چار موسم، مون سون کی گراں بہا نعمت اس پر آبپاشی کیلئے ہزاروں چھوٹے اور درمیانے ڈیم بنانے کے قدرتی ذرائع، دریا، ندی نالے، بہترین نہری نظام، ہر طرح کی زرعی پیداوار سبھی کچھ موجود ہے مگر پھر بھی اقوامِ متحدہ کے ادارہ ورلڈ فوڈ پروگرام کے مطابق پاکستان میں غذائی قلت کے شکار افراد کی تعداد 6کروڑ سے بڑھ کر 7کروڑ 70لاکھ تک پہنچ چکی ہے، من حیث القوم یہ بات ہمارے لئے لمحہ فکریہ ہے جبکہ کسی سربراہِ حکومت کی زبان پر آنے والے یہی الفاظ یقیناً اس ملک کے لئے خطرے کی گھنٹی کی حیثیت رکھتے ہیں جہاں یہ صورتحال پائی جاتی ہو۔ وزیراعظم عمران خان نے جمعرات کے روز ڈیرہ اسماعیل خان میں کسان کنونشن اور کسان کارڈ تقسیم کرنے کی تقریب سے اپنے خطاب میں خبردار کیا ہے کہ اگر آبادی اسی طرح بڑھتی رہی اور پیداوار کی شرح میں اضافہ نہ ہوا تو آگے چل کر ملک کو بھوک اور افلاس کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔ اس ضمن میں وزیراعظم کا یہ حوالہ بھی بجا ہے کہ زرعی ملک ہونے کے باوجود گزشتہ برس 40لاکھ ٹن گندم درآمد کرنی پڑی اور رواں سال بھی ریکارڈ پیداوار کے باوجود صورتحال جوں کی توں ہے۔ مزید برآں کپاس جیسی انتہائی اہم صنعتی و برآمدی جنس جس پر معیشت کا بڑا دارومدار ہے گزشتہ کئی برس سے انتہائی کم پیداوار دے رہی ہے حالانکہ سازگار قدرتی ماحول کے ساتھ ساتھ ملک میں زرعی شعبے سے متعلق وفاقی اور صوبائی سطحوں پر وزارتیں، سائنسی ادارے، جامعات، کسانوں کیلئے مائیکرو فنانس بینک، کھاد کے کارخانے اور دیگر سہولیات کی فراہمی کیلئے مکمل انفراسٹرکچر سبھی کچھ موجود ہے۔ اس کے باوجود ملک میں کل زرعی رقبے کا محض 47فیصد زیر کاشت لایا جاتا ہے۔ ڈیڑھ ارب کی آبادی والے ملک بھارت میں یہ شرح 60یہاں تک کہ قازقستان میں 80.4فیصد (سب سے زیادہ)ہے۔ 1961میں پاکستان کا 46.3فیصد زرعی رقبہ زیر استعمال تھا گویا 60برس میں صرف اعشاریہ سات فیصد کو قابلِ کاشت بنایا گیا اس کے مقابلے میں ترقی یافتہ ممالک پہلے کے مقابلے میں فی ایکڑ دوگنا پیداوار حاصل کر رہے ہیں۔یہ بات باعث اطمینان ہے کہ حکومت نے کسان کنونشن منعقد کرکے ایک ناگزیر ضرورت پوری کی ہے جس کے توسط سے کاشتکاروں کو درپیش مسائل براہِ راست حکام کے علم میں آتے ہیں۔ تاہم یہ ضروری ہو جاتا ہے کہ زرعی سائنسدانوں کے ساتھ منصوبہ بندی، خزانہ، زراعت، صنعت و تجارت سے متعلق ارباب بست و کشاد کی بامقصد کانفرنسیں منعقد کی جائیں خصوصاً ترقی یافتہ ممالک کے تجربات کی روشنی میں آبادی اور خوراک سے متعلق ٹھوس قلیل و طویل مدتی منصوبے بنا کر ان پر بروقت عمل درآمد یقینی بنایا جائے تاکہ مستقبل کے چیلنجوں سے عہدہ برآ ہوا جا سکے۔

ALSO READ:  Shamsi Tawanai - Why Solar Power is Important for Pakistan

You are browsing Danger of Hunger vs Population. To find other columns at DarsoTadrees, Click on Columnn Category

Any question related to your study, you can feel free create topic / question at DarsoTadrees Support Forum. ٰIf you found any error in this article, please highlight it in Comments Section.

Support Dars-o-Tadrees

Please remember, Dars-o-Tadrees is offering free guidance to students and meeting its expenditures through Page Views and Google Adsense. You can support Dars-o-Tadrees by spreading DarsoTadrees and its posts on your social networks like Facebook, Twitter etc to increase its Page Views. You can also donate some funds to support Dars-o-Tadrees.

Leave a Comment